فوٹوگرافر شاہ مرئی کی یادیں ان کی اپنی تصاویر میں

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے فوٹو گرافر شاہ مرئی افغانستان کے دارالحکومت کابل میں ہونے والے دھماکے میں مارے گئے۔ ہم ان کے آبائی ملک میں کیے گئے اور ان کے کام کی ایک جھلک پیش کر رہے ہیں۔

Afghan residents inspect the site of a suicide bombing outside a voter registration centre in Kabul on 22 April 2018تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption مرئی باقاعدگی سے خودکش دھماکوں کے مقامات کی عکس بندی کیا کرتے تھے۔ یہاں مقامی لوگ 22 اپریل کو ایک ووٹر رجسٹریشن سینٹر کا معائنہ کر رہے ہیں
An Afghan man digs a grave, 2018تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption ایک افغان باشندہ خود کش حملے کانشانہ بننے والے شحض کی قبر کھود رہا ہے۔ اس حملے میں بچوں سمیت 60 افراد ہلاک ہوئے تھے
Two Afghan women weep for their relatives at a hospital following explosions at a Shiite cultural centre in Kabul, 2017تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption سنہ 2017 میں کابل کے ثقافتی سینٹر میں ہونے والے بم دھماکے میں ہلاک ہونے والوں کی رشتہ دار خواتین رو رہی ہیں
US Senator John Kerry laugh with Afghan President Hamid Karzai at a press conference at the presidential palace in Kabul, 20 October 2009تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption مرئی نے سیاسی تقریبات کی بھی کوریج کی۔ یہاں 2009 میں سابق صدر حامد کرزئی اور امریکی سینیٹر جان کیری کو ایک نیوز کانفرنس کے دوران ہنستے ہوئے عکس بند کیا گیا ہے
British Prime Minister Gordon Brown addresses British soldiers of the Nato-led International Security Assistance Force (ISAF) at Camp Bastion in Helmand Province, 21 August 2008تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption دس سال قبل برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن کے ہلمند میں برطانوی فوجیوں سے خطاب کے موقع پر بھی مرئی وہاں موجود تھے
A supporter of Afghan presidential candidate Abdullah Abdullah, one of the 41 contenders in the upcoming election, makes her way to a campaign event in Kabul on 4 August 2009تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption سنہ 2009 میں مرئی نے صدارتی امیدوار عبداللہ عبداللہ کی انتخابی مہم میں شامل ایک خاتون کو عکس بند کیا
An Afghan health worker administers polio vaccine to a child on the first day of a vaccination campaign in Kabul on October 3, 201تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption مرئی نے روز مرہ زندگی کے مختلف پہلوؤوں کو بھی موضوع بنایا جن میں ملک کے زیادہ مثبت پہلو بھی اجاگر ہوئے۔ یہاں 2010 کے دوران ملک مںی جاری مہم کے دوران ایک بچہ کو پولیو ویکسین پلائی جا رہے ہے
Afghan women exercise at the Setara Sahar Afghan Bodybuilding Gym in Herat, 2008تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption طالبان کے دور میں ایک طویل عرصے تک اپنے گھروں تک محدود رہنے کے بعد سنہ 20118 میں مرئی نے ایک جم میں خواتین کو عکس بند کیا
Afghan visitors ride a fairground ride at the Park Shahar or City Park, in Kabulتصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption کابل کے ایک پارک میں جھولے کا مزہ لیتے افغان
An employee taking a film reel to be digitised at the state-run Afghan Film department in Kabulتصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption سنہ 2017 میں مرئی کی بنائی اس تصویر میں وہ فلمیں دیکھی جا سکتی ہیں جو طالبان کے دور میں چھپا لی گئی تھیں اور اب انہیں ڈیجیٹائز کیا جا رہا ہے
An Afghan man walks along a path under snow-laden trees in Kabul, 2017تصویر کے کاپی رائٹ Shai Marai / AFP
Image caption ایک افغان شخص کابل میں برف سے ڈھکے درختوں تلے بنے راستے سے گزر رہا ہے
Afghan children play on the turret of an abandoned Soviet tank in the Panjshir valley , 2003تصویر کے کاپی رائٹ Shah Maria / AFP
Image caption سنہ 2000 کی دہائی کے آغاز میں افغانستان کی سڑکوں پر جنگ کے ملبے کے ساتھ ساتھ سویت یونین کے تباہ حال گاڑیاں دیکھنے کو ملتی تھیں۔ جنہیں طالبان نے 1979 سے 1989 کے دوران تباہ کیا۔ اس تصویر میں مرئی نے ایسے ہی ایک تباہ ٹینک کے ساتھ کھیلتے ہوئے بچوں کو عکس بند کیا
An Afghan girl from a family which returned from Iran covers her face as she stands in front of her tent on the outskirts of Kabul, February 2008تصویر کے کاپی رائٹ Shah Marai / AFP
Image caption اس تصویر میں موجود لڑکی ان 6000 مہاجرین میں سے ایک ہے جو سنہ 2008 میں ایران سے واپس وطن لوٹے

تمام تصاویر شاہ مرئی / اے ایف پی

This post is shared by PakPattani.com For Information Purpose Only

اپنا تبصرہ بھیجیں