غیرمنتخب شخص کا بجٹ پیش کرنا پارلیمنٹ کی توہین ہے، خورشید شاہ

اسلام آباد : قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے کہا ہے کہ کل بجٹ اجلاس میں ایوان اور آئین کامذاق اڑایا گیا، غیر منتخب شخص کا بجٹ پیش کرنا پارلیمنٹ کی توہین ہے، سپریم کورٹ نوٹس لے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا کہ گزشتہ روز غیر منتخب شخص سے حلف لیا گیا، اس اقدام سے نواز شریف کے بیانیے ووٹ کو عزت دو کی خلاف ورزی ہوئی.

خورشید شاہ نے کہا کہ یہ ووٹ کی عزت نہیں بلکہ ووٹر کی توہین ہے، آئین کامذاق اڑایا گیا، عدالت کو ہی آئین کی تشریح کرنا ہوگی، سپریم کورٹ غیرمنتخب شخص کا بجٹ پیش کرنے کا نوٹس لے۔

اپوزیشن لیڈر کا کہنا تھا کہ حکومت کے اس اقدام سے ایوان کا استحقاق مجروح ہوا ہے، اس کیخلاف ایوان میں قرارداد پیش ہوسکتی ہے، حکومت کو بجٹ پاس کرانے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑے گا۔

قائد حزب اختلاف کا مزید کہنا تھا کہ اپوزیشن کل پیش کیے جانے والے بجٹ کو نہیں مانتی، حالیہ بجٹ اعداد و شمار کا ہیرپھیر ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز قومی اسمبلی میں پیش کیے جانے والے وفاقی بجٹ پر اپنے ردعمل میں قائد حزب اختلاف خورشید شاہ کا بجٹ کو واضح طور پر غیر اخلاقی عمل قرار دیتے ہوئے کا کہنا تھا کہ ن لیگ نے آنے والی حکومت کا حق چھینا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔  

Print Friendly, PDF & Email

This post is shared by PakPattani.com For Information Purpose Only

اپنا تبصرہ بھیجیں