مسلم لیگ (ن) کی حکومت کا چھٹا اورآخری بجٹ: ’دفاع کے لیے ایک کھرب سے زیادہ مختص‘

بجٹ
Image caption ماضی کے پانچ بجٹس کے برعکس اس بجٹ کی کوئی خاص سمت متعین نہیں کی گئی

پاکستان کے وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے جمعے کی شام اپوزیشن کے پرزور احتجاج کے دوران پارلیمان کے سامنے مسلم لیگ ن کی حکومت کا چھٹا اور آخری بجٹ پیش کیا ہے۔

وفاقی بجٹ کا مجموعی حجم 59 کھرب 32 ارب 50 کروڑ روپے ہے اور یہ 1890.2 ارب روپے خسارے کا بجٹ ہے جو کہ مجموعی قومی پیداوار (جی ڈی پی) کا 4.9 فیصد ہے۔

ماضی کے پانچ بجٹس کے برعکس اس بجٹ کی کوئی خاص سمت متعین نہیں کی گئی اور ماہرین کا کہنا ہے کہ بظاہر اس اقدام کا مقصد آنے والی حکومت کو یہ موقع فراہم کرنا ہے کہ وہ اسے اپنی مرضی کی سمت دے سکے۔

بجٹ تقریر سے چند گھنٹے قبل ہی مفتاح اسماعیل نے وفاقی وزیر خزانہ کا حلف اٹھایا اور بجٹ اجلاس کے آغاز پر اپوزیشن کی جانب سے اس پر شدید احتجاج بھی کیا گیا۔

پاکستان کا بجٹ 19-2018: کب کیا ہوا؟

موجودہ بجٹ میں مختلف کیا ہے؟

اہداف

آئندہ مالی سال کے لیے مجموعی قومی پیداوار (جی ڈی پی) کا ہدف 6.2 فیصد رکھا گیا ہے جبکہ حکومت کو امید ہے کہ وہ ٹیکس وصولیوں کی مد میں 4435 ارب روپے جمع کر لے گی۔

افراط زر کی شرح چھ فیصد سے کم رکھنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے جبکہ بجٹ خسارہ 4.9 فیصد تک لانے کا ہدف ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے لیے 138 ارب روپے کی تجویز پیش کی گئی ہے

ترقیاتی بجٹ

سرکاری شعبے کے ترقیاتی پروگرام کے لیے وفاقی بجٹ میں 800 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔

بجٹ میں ترقیاتی پروگرام کا کل حجم 1030 ارب روپے رکھا گیا ہے اور مختص 800 ارب کے علاوہ اضافی 230 ارب سیلف فنانسنگ کے ذریعے حاصل کیے جائیں گے۔

توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے لیے 138 ارب روپے کی تجویز پیش کی گئی ہے جبکہ پاکستان ریلوے کی ترقیاتی سرمایہ کاری کے لیے 39 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔

پانی کے ذخیروں کے شعبے کے لیے 70 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 12 لاکھ روپے سالانہ تک آمدن ٹیکس فری ہو گی

تنخواہ دار طبقے کے لیے ٹیکس چھوٹ، سرکاری ملازمین کے لیے مراعات

یکم جولائی 2018 سے سول اور فوجی ملازمین کو ان کی بنیادی تنخواہ پر 10 فیصد ایڈہاک ریلیف الاؤنس دیا جائے گا جبکہ تمام پنشنرز کے لیے بھی یکساں‌ دس فیصد اضافہ تجویز کیا گیا ہے۔

75 سال سے زیادہ عمر کے پنشنرز کے لیے پنشن کی کم از کم حد 15 ہزار روپے ماہانہ مقرر کی جا رہی ہے۔

سرکاری ملازمین کے لیے ہاؤس رینٹ الاؤنس میں بھی 50 فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔

وزیراعظم کی جانب سے تنخواہ دار افراد کے لیے ٹیکس کی جس چھوٹ کا ٹیکس ایمنٹسی سکیم میں اعلان گیا تھا اسے بھی بجٹ کا حصہ بنا دیا گیا ہے۔

اس سکیم کے تحت اب 12 لاکھ روپے سالانہ تک آمدن ٹیکس فری ہو گی۔

12 لاکھ سے 24 لاکھ روپے سالانہ کمانے والوں کو 12 لاکھ سے زیادہ آمدن پر پانچ فیصد ٹیکس دینا ہو گا۔

24 لاکھ سے 48 لاکھ روپے آمدن والوں کو 24 لاکھ سے زیادہ آمدن پر 10 فیصد ٹیکس دینا ہو گا۔

48 لاکھ سے زائد آمدن رکھنے والوں کو 15 فیصد ٹیکس کی ادائیگی کرنا ہو گی۔

40 لاکھ روپے سے زائد مالیت کی جائیداد کی خریداری کے لیے ٹیکس دہندہ ہونا لازمی ہو گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ دفاعی بجٹ ایک کھرب سے تجاوز کر گیا ہے

دفاعی بجٹ

حکومت نے دفاعی بجٹ میں 100 ارب روپے یعنی 10.2 فیصد کا اضافہ کر کے اسے 1100 ارب روپے کرنے کی تجویز دی ہے اور یوں پاکستان کا دفاعی بجٹ اب ایک کھرب روپے سے تجاوز کر گیا ہے۔

گذشتہ سال یہ اضافہ نو فیصد تک تھا۔ حکومت کئی برس سے ملکی دفاعی بجٹ میں افراط زر کے تناسب سے اضافہ کرتی رہی ہے تاہم اس بار یہ اضافہ اس شرح سے کہیں زیادہ ہے۔

غذائی کمی کے خاتمے کا عزم

اس بجٹ میں تعلیم کے شعبے کے لیے 97 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں جبکہ صحت کے شعبے کے لیے 13.9 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔

تاہم حکومت نے ملک بھر میں بچوں میں غذائی کمی کے خاتمے کے لیے 10 ارب روپے علیحدہ سے مختص کیے ہیں۔

زرعی قرضوں کا ہدف 1100 ارب رکھا گیا ہے جبکہ زرعی مشینری پر سیلز ٹیکس سات فیصد سے کم کر کے پانچ فیصد کر دیا گیا ہے۔

This post is shared by PakPattani.com For Information Purpose Only

اپنا تبصرہ بھیجیں